donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kishwar Naheed
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* حسرت ہے تجھے سامنے بیٹھے کبھی دیک¬ *
غزل

حسرت ہے تجھے سامنے بیٹھے کبھی دیکھوں
میں تجھ سے مخاطب ہوں ترا حال بھی پوچھوں

دل میں ہے ملاقات کی خواہش کی دبی آگ
مہندی لگے ہاتھوں کو چھپاکر کہاں رکھوں

جس نام سے تونے مجھے بچپن میں پکارا
اک عمر گزرنے پہ بھی وہ نام نہ بھولوں

تو اشک ہی بن کر مری آنکھوں میں سماجا
میں آئینہ دیکھوں تو ترا عکس بھی دیکھوں

پوچھوں کبھی غنچوں سے ستاروں سے ہوا سے
تجھ سے ہی مگر آکے ترا نام نہ پوچھوں

جو شخص کہ ہے خواب میں آنے سے بھی خائف
آئینۂ دل میں اُسے موجود ہی دیکھوں

اے میری تمنا کے ستارے تو کہاں ہے
تو آئے تو یہ جسم شبِ غم کو نہ سونپوں

کشور ناہید

Islamabad
(Pakistan)
M: 0092512294754
0092512275157
بہ شکریہ جانِ غزل مرتب مشتاق دربھنگوی
+++
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 347