donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اصول_ عشق سے نا آشنا ہے تو یا میں؟ *
غزل
 از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
 
اصول_ عشق سے نا آشنا ہے تو یا میں؟
حقوق پیار کے کرتا ادا ہے تو یا میں؟
 
وفا کے نام پہ اک داغ_ بدنما ہے کون
وفا کے حسن سے آراستہ ہے تو یا میں؟ 
 
کیا ہے میں نے ترا انتظار ہر لمحہ
بھلا کے وعدہ،  ہوا غیر کا ہے تو یا میں؟ 
 
ملن کے سورگ کی مستی ہوئی ہے کس کو نصب
اکیلے پن کے نرک میں گرا ہے تو یا میں؟
 
تجھے رہی ہے ہمیشہ تلاش خوشیوں کی  
سبھی کے درد میں شامل رہا ہے تو یا میں؟
 
خطائیں کون کریگا، بشر ہوں میں یا تو
معاف کون کریگا، خدا ہے تو یا میں؟
 
ہوا ہے رشتہ اگر منقطع تو کیوں جاوید
غلط ہیں دونوں ہی ہم یا تو، یا ہے تو یا میں  
 
****
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 513