donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* رخ کی رخ سے بے رخی ہرگز نہیں *
 غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
رخ کی رخ سے بے رخی ہرگز نہیں
دل کی دل سے بد دلی ہرگز نہیں 
 
اور سب منظور ہے محبوب_ من
پیار میں سوداگری ہرگز نہیں
 
چاہتے ہیں وہ تعلق توڑنا
ہو نہیں سکتا کبھی، ہرگز نہیں
 
گفتگو کے زاویے ہیں اور بھی
یہ ملاقات آخری ہرگز نہیں
 
غلبہ ہو سچائی کا احساس پر
برتری یا کمتری ہرگز نہیں
 
جس کے اندر عاجزی غائب ہوئی
کچھ بھی ہو وہ آدمی ہرگز نہیں
 
دشموں سے دوستی ممکن ہے دوست
دوستوں سے  دشمنی  ہرگز نہیں
 
موج و مستی ایک حد تک ٹھیک ہے
نوجواں بے رہ روی ہرگز نہیں
 
وقت کیا، حالات کیا ور عمر کیا
علم سے بے رغبتی ہرگز نہیں
 
کام ہیں جاوید تیرے اور بھی
رات دن یہ شاعری ہرگز نہیں
****
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 478