donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* شے زندگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پو *
غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل
  
 شے زندگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
بیچارگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
 
کب عقل کے ہے پاس جواب اس سوال کا  
دیوانگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
 
معشوق دل میں، جان میں، آنکھوں میں، ذہن میں
وابستگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
 
دل پر ذرا سی ٹھیس لگی اور تو رو دیا
دل کی لگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
  
ارض و فلک میں روح ہے محو_ تلاش_ خلد
آوارگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ  
 
اسکی رضا میں میری رضا، زندگی کہ موت
یہ بندگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
 
بارش کی طرح ہوتا ہے افکار کا نزول
وارفتگی ہے کیا، مری دیوانگی سے پوچھ
 
جاوید آج ہاں ہے تو کل تیری ہوگی نا
آمادگی ہے، کیا مری دیوانگی سے پوچھ
 
 نوٹ: اس غزل میں ایسے قوافی استعمال کے گئے ہیں جن میں حرف روی سے پہلے کے حروف متحرک ہیں- یہ نسبتاً کم استعمال کیا گیا طریقہ ہے-
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 504