donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اک غم عشق ہی کب ہے، ہمیں غم اور بھی ہ& *

 غزل


ڈاکٹر جاوید جمیل
 
اک غم_عشق ہی کب ہے، ہمیں غم اور بھی ہیں  
صرف معشوق نہیں، اہل_ستم اور بھی ہیں

تو نہ ہوتا تو کہاں آتا یہ انداز_سخن
بے وفائی ہی نہیں، تیرے کرم اور بھی ہیں

تیرے لوٹ آنے کی رکھیں گے نہ کوئی امید
پالنے ہونگے بھرم ہی تو بھرم اور بھی ہیں
 
آ گئے پاس، نہ رک، اور بڑھا دے رفتار
راہ_منزل میں ابھی چند قدم اور بھی ہیں

ہم اگر مٹ بھی گئے، حق نہیں مٹنے والا
جنکو اٹھنا ہے ابھی، حق کے علم اور بھی ہیں
 
ہم نے ٹھکرا کے صنم سارے، چنا ایک خدا
وہ ہمیں آکے بتاتے ہیں صنم اور بھی ہیں

جنکی تحریروں میں ہوتی ہے کوئی کام کی بات
صرف جاوید نہیں، اہل_قلم اور بھی ہیں


۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸

 

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 561