donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* بیتاب الفتوں کا بھرم رکھ سکے تو رک *
غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
 بیتاب الفتوں کا بھرم رکھ سکے تو رکھ
تنہائیوں میں میری قدم رکھ سکے تو رکھ
 
 قائم سدا یہ زور_ قلم رکھ سکے تو رکھ
یونہی بلند حق کا علم رکھ سکے تو رکھ
 
احسان دوستوں پہ سبھی کرتے ہیں مگر
تودشمنوں پہ چشم _ کرم رکھ سکے تو رکھ
 
میرا جنوں بھی سر نہ جھکائے گا تا حیات  
جاری تواپنے ظلم و ستم رکھ سکے تو رکھ
 
تو ہے بہار، قدموں میں بھی تیرے پھول ہیں
میری خزاں میں پانو صنم رکھ سکے تو رکھ
  
ہر گھر کا فرش پیار ہے، ایثاراس کی چھت
گھرکو سجا کے مثل_ ارم رکھ سکے تو رکھ
 
دنیا کے غم میں روتا ہے جاوید کس لئے
 آنکھیں خدا کی یاد میں نم رکھ سکے تو رکھ
*******************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 545