donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اپنے ہونٹوں پہ کہاں اس نے کہانی رک *

 

                                                                                                                                                                                                     غزل
 
اپنے ہونٹوں پہ کہاں اس نے کہانی رکھّی
بات جو کچھ بھی تھی پلکوں کی زبانی رکھّی
دل کی راہوں سے مری کون ابھی گزرا ہے
کس نے آنکھوں کے دریچوں میں نشانی رکھّی
پیاس جاگی تو میں قطرے کا طلب گار ہوا
اس نے ہونٹوں پہ سمندر کی روانی رکھّی
مدتوں بعد مری آنکھوں سے چھلکے آنسو
لہجۂ نو میں وہی بات پرانی رکھّی
جانے کب سے ہے تعاقب میں خزاں کا موسم
رت مگر میرے لیے کس نے سہانی رکھّی
رات آئی تو مجھے یاد نہ آیا کچھ بھی
صبح نے آکے دل و جاں میں گرانی رکھّی
کس نے عادل کے تخیل کو تہہ و بالا کیا
کس نے لفظوں میں نئی شکل معانی رکھّی
 
***************************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 389