donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* عدل کی زنجیر یوں تو دسترس سے دور ہے *

 

 غزل
 
عدل کی زنجیر یوں تو دسترس سے دور ہے
ہاں، مگر عدلِ جہانگیری بہت مشہور ہے
سلسلہ بے ربط خوابوں کا اگا ہے آنکھ میں
دل، شکستہ خواہشوں سے میرا لیکن چور ہے
بے بسی نے رنگ کچھ ایسا دکھایا ہے ہمیں
ہر خوشی سے دل ہمارا اب تلک مہجور ہے
ایک اک کرکے بجھے ہیں چاہتوں کے سب چراغ
دل کی سرحد پر مگر پھیلا ہوا سا نور ہے
کررہی ہیں میری آنکھیں آج کل کس کا طواف
سامنے جلوہ نما ان کے بھی کوئی طور ہے
بند آنکھوں سے نظر آتا ہے عادل وہ ہمیں
اور کھلی آنکھیں اگر ہوں تو سدا مستور ہے
 
*****************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 383