donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مضطرب آنکھوں میں جب امید لہرانے ل« *

 

غزل
 
مضطرب آنکھوں میں جب امید لہرانے لگی
حوصلے زندہ ہوئے اور زندگی بھانے لگی
کتنا خوش تھا آسماں بدلے میں مجھ کو مل گیا
جو زمیں تھی پاس میرے ہاتھ سے جانے لگی
سائباں سے لفظ بے معنی اچانک ہوگئے
دھوپ سایہ بن کے میرے گرد لہرانے لگی
جو بھی اپنے تھے وہ اوجھل میری آنکھوں سے ہوئے
یاد ہے جو زندگی کی ڈور سلجھانے لگی
حبس کا موسم میری آنکھوں پہ چھا جاتا مگر
دَر دریچے کھول کر تازہ ہوا آنے لگی
چاند میری چھت کے اوپر آج پھر ہنسنے لگا
روشنی کمرے میں اس کے جاکے لہرانے لگی
آنکھ میں دشتِ دعا رکھ کر بھی میں جاؤں کہاں
تھی تمنا جو بھی میرے دل میں مرجھانے لگی
خوف پیچھا کرتے کرتے مجھ کو بے گھر کرگیا
حادثوں کی دھند میری گرد کو پانے لگی
پھر سے میری زندگی پر تبصرہ ہونے لگا
پھر سے میری یاد آکر اس کو تڑپانے لگی
منتشر خوابوں کا عادل سلسلہ جڑتا گیا
آنکھ کی بستی میں لیکن گرد سی چھانے لگی
 
*****************
 
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 344