donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* حقیقتوں کا بھی کوئی شمار ہوتا ہے *

 

غزل
 
حقیقتوں کا بھی کوئی شمار ہوتا ہے
سمند وہم پہ ہر اک سوار ہوتا ہے
دعا کے واسطے اٹّھے تھے ہاتھ میرے بھی
سنا تھا میں نے بھی پروردگار ہوتا ہے
میں اس کی راہ کا جلتا دیا نہیں ہوں جب
وہ میرے واسطے کیوں اشک بار ہوتا ہے
لگی ہے آگ یہ کیسی ہمارے سینے میں
رکا جو سیل تھا آنکھوں کے پار ہوتا ہے
اسی مقام پہ میں نے بھی گھر بنایا تھا
کہ یہ خیال بھی بے اعتبار ہوتا ہے
عجب نہیں کہ وہی باوقار ہوجائے
جو اپنے آپ پہ ہردم نثار ہوتا ہے
مگر سلیقے سے کٹتی ہے زندگی عادل
ہوا کے ساتھ بھی گرد و غبار ہوتا ہے
 
***************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 361