donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* رات اپنی بے بسی کو جب سے دہرانے لگی *

 

 غزل
 
رات اپنی بے بسی کو جب سے دہرانے لگی
کان کے پردے کو کوئی چیخ سہلانے لگی
پیاس کے صحرا سے تو میرا گزر اکثر ہوا
تشنگی مل کر گلے کیوں آج شرمانے لگی
خواب سے آنکھوں کا پیچھا چھوٹ جائے بھی تو کیا
چھوڑ کر جب ساتھ میرا زندگی جانے لگی
کیا ہوئیں بے رنگ سمتیں کیا ہوئے اجڑے دیار
دل کے ویرانے پہ کیسی روشنی چھانے لگی
اس طرح راہوں میں تنہا گھومنا اچھا نہیں
اُف! کہ اب تنہائی بھی تنقید فرمانے لگی
تم بھی عادل اس کے آگے ہاتھ پھیلاؤ گے کیا
جس کے در پر ساری دنیا سر کے بل جانے لگی
 
**************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 365