donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* میں یوں شکوہ نہیں کرتا مجھے گر مات  *

 

 غزل
 
 
میں یوں شکوہ نہیں کرتا مجھے گر مات بھی ہوتی
شکستہ پر اگر ہوتا تو کوئی بات بھی ہوتی
سفر کی دھند آنکھوں میں کئی نقشے بناتی ہے
مگرشہپر یہ کہتے ہیں کہیں اب رات بھی ہوتی
ہمیشہ دوستوں سے اپنے میں ہی جیت جاتا ہوں
مقابل آئینہ ہوتا کبھی تو مات بھی ہوتی
مرا عجز بیاں ہی ہے کہ وہ خاموش ہے اب تک
نہیں تو سنگ آنکھوں سے کبھی برسات بھی ہوتی
سفر کی دھوپ میں لوگو، جسے اپنا سمجھ بیٹھے
اگر عالی نسب ہوتا تو اعلی ذات بھی ہوتی
جھٹکنا خواب پلکوں سے تمہارا کھیل ہے عادل
مگر اک پورا ہوجاتا تو کوئی بات بھی ہوتی
 
%%%%%%%%
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 368