donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* لبوں سے شکوہ نہ دل سے ہی آہ کرنا تھا *

 

غزل
 
 
لبوں سے شکوہ نہ دل سے ہی آہ کرنا تھا
اسے حیات سے اپنی نباہ کرنا تھا
نظر کتاب میں منظر کوئی ابھر آتا
زمیں حصار کو بھی رقص گاہ کرنا تھا
نئے چراغ سے مرعوب ہوگیا کیسے
اسے ضمیر سے اپنے نباہ کرنا تھا
عبادتوں سے زمیں تنگ ہوگئی ہے جب
خلا کی آنکھ کو بھی عید گاہ کرنا تھا
نئی لکیر ہتھیلی پہ کھینچ دی ہوتی
کہ مجھ غریب کو قسمت کا شاہ کرنا تھا
کوئی بھی سمت نہیں تھی مری حیات میں جب
خلا کی راہ سے مجھ کو نباہ کرنا تھا
اٹھے ہزارہا طوفان اس لیے عادل
کہ شاخِ فکر کو تیری نباہ کرنا تھا
 
*************
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 348