donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اسے جب کوئی بھی نشّہ نہیں ہے *

 

غزل
 
 
اسے جب کوئی بھی نشّہ نہیں ہے
وہ اچھا ہے، مگر اچھا نہیں ہے
چھپا رکھّا ہے خنجر آستیں میں
مگر دامن پر اک دھبّہ نہیں ہے
جواں سارے ہی بوڑھے ہوگئے ہیں
اور اب بچّہ کوئی بچّہ نہیں ہے
نظر میں دور تک بنجر کھلے ہیں
درختوں پر کوئی پتہ نہیں ہے
میں کیسے بات اس کی مان لیتا
وہ اپنے قول کا پکّا نہیں ہے
خطائیں اس سے بھی ہوتی ہیں، لیکن 
ہنر میں اپنے وہ کچا نہیں ہے
زباں پر جھوٹ ہی اگتے ہیں عادل
کوئی بھی شخص اب سچا نہیں ہے
 
*************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 371