donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مرے رستے میں گردش کی بلائیں رقص کر *

 

 غزل
 
 
مرے رستے میں گردش کی بلائیں رقص کرتی ہیں
سفر میں دور تک لیکن دعائیں رقص کرتی ہیں
تری جیسی کوئی صورت نظر سرحد میں آتی ہے
تو میرے دل میں یادوں کی گھٹائیں رقص کرتی ہیں
چراغ درد سے کیسے میں راہِ دل کروں روشن
حصار جاں میں وحشت کی ہوائیں رقص کرتی ہیں
مری تنہائیاں جب بھی مجھے ڈسنے کو آتی ہیں
تو چوکھٹ پر مرے دل کی صدائیں رقص کرتی ہیں
یہ خونی رنگ ایسے ہی نہیں جاگا ہے آنکھوں میں
ہر اک منظر میں ورثے کی انائیں رقص کرتی ہیں
اندھیرا جاگتے کانوں میں عادل سب کے چیخا تھا
اگا سورج تو آنکھوں میں بلائیں رقص کرتی ہیں
*********************
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 420