donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* خواہشوں کی پتیاں بکھری ہیں کیا *

 

غزل
 
 
خواہشوں کی پتیاں بکھری ہیں کیا
صحن گل میں تتلیاں بکھری ہیں کیا
شہر جاں میں پوچھتا کوئی نہیں
بے بسی کی دھجیاں بکھری ہیں کیا
جھانکتے ہو کیا سمندر آنکھ میں
اس کے اندر سیپیاں بکھری ہیں کیا
اس کی یادیں آکے دروازے پہ پھر
آہٹوں کے درمیاں بکھری ہیں کیا
موسم تازہ کے بارے میں کہو
کچھ گلوں کی پتیاں بکھری ہیں کیا
پھنس گیا ہوں میں بھنور میں رات کی
ساحلوں پر کشتیاں بکھری ہیں کیا
چبھ رہا ہے کیا ہمارے پاؤں میں
سازشوں کی کرچیاں بکھری ہیں کیا
کیسا منظر دیکھتا ہوں دور تک
آنکھ میں رنگینیاں بکھری ہیں کیا
کب سے عادل ہے محاذ جنگ پر
گھر میں اس کے سسکیاں بکھری ہیں کیا
 
*****************
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 357