donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مجھ سے کہتا تھا کچھ مرا سایا *

 

غزل
 
مجھ سے کہتا تھا کچھ مرا سایا
جان کر بھی سمجھ نہیں پایا
دل کی سرحد سے جب بھی گزرا میں
سارا ماحول ماتمی پایا
گھر کی دیوار گرگئی کیسے
لٹ گیا کیسے سارا سرمایا
ایک مدّت گزار دی دل نے
آج جیسا کبھی نہ گھبرایا
حال بھی چھا گیا ہے آنکھوں میں
بھول ماضی کو بھی نہیں پایا
جس کو مدّت لگی بنانے میں
ایک ساعت نے ہی اسے ڈھایا
جب بھی ملنے کی جستجو جاگی
آکے محفل میں اس کی اکتایا
دیکھ کر عکس چیخ اٹھا عادل
آئینہ جب بھی روبرو آیا
 
**************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 369