donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* یہ دل کیا، روح تک گھبرا رہی ہے *

 

غزل
 
یہ دل کیا، روح تک گھبرا رہی ہے
مجھے تنہائی جیسے کھا رہی ہے
نہ جانے چھاؤں کس کو ہے میسر
سنہری دھوپ کس پر چھا رہی ہے
عجب تنہائیاں ہیں سونے گھر میں
خموشی چیختی ہی جارہی ہے
ہمیں سے بیر ہے پاگل ہوا کو
ہمیں پر ظلم سارے ڈھا رہی ہے
سنہرے لفظ آنکھوں میں اگے ہیں
مرے کانوں میں کوئل گا رہی ہے
مزہ آتا ہے چھپ کر دیکھنے میں
نظر ملتے ہی وہ شرما رہی ہے
مرے اشعار گہرے ہورہے ہیں
کہ میری فکر سجتی جارہی ہے
مرے بھی پاؤں عادل تھک گئے ہیں
مری بھی سانس اکھڑی جارہی ہے
 
*****************
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 392