donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کوئی سایہ رخ دیدار پر ابھرا نہیں ہ *

 

 غزل
 
کوئی سایہ رخ دیدار پر ابھرا نہیں ہے کیا
شناسا شہر میں جیسے کوئی رہتا نہیں ہے کیا
در و دیوار پر کیوں ہجر کے جالے سے چھائے ہیں
زمانے سے کوئی دہلیز پر آیا نہیں ہے کیا
تری آنکھوں  کا منظر بھی بہت سنسان لگتا ہے
تری بھی سوچ پلکوں پر کوئی رہتا نہیں ہے کیا
مجھے بھی ہارنے میں اب کوئی لذّت نہیں ملتی
تجھے بھی زیر کرنے میں مزہ آتا نہیں ہے کیا
پلک پر میری آنکھوں کے یہ کیسی دھند چھائی ہے
اجالا خواب کے بھی شہر میں پھیلا نہیں ہے کیا
کسی بت سے تو اے عادل تجھے بھی دل لگانا تھا
کوئی بھی شخص دنیا میں ترے جیسا نہیں ہے کیا
 
**************
 
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 359