donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کہتا ہوں تو کہا نہیں جاتا *

 

غزل
 
کہتا ہوں تو کہا نہیں جاتا
اس کا ہنسنا سہا نہیں جاتا
چڑھتے دریا کو پار کرلوں مگر
اک قدم بھی چلا نہیں جاتا
تیر آئے ہیں اشک آنکھوں میں
کچھ زباں سے کہا نہیں جاتا
تیر لفظوں کے دل میں ہیں پیوست
وار کوئی خطا نہیں جاتا
بات اپنی تو چھوڑے صاحب
دکھ کسی کا سہا نہیں جاتا
گھر کا گھر ہے اداس اس کے لیے
گھر کیوں اپنے وہ آ نہیں جاتا
دل کی ویرانیوں میں رہتا ہے
آنکھ میں کیوں سما نہیں جاتا
روز ملنے سے ہیں خفا عادل
بن ملے بھی رہا نہیں جاتا
 
**************
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 386