donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Adil Hayat
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* جو سانس لیتا ہوں، دل میں چبھن سی ہو *

 

 غزل
 
 
جو سانس لیتا ہوں، دل میں چبھن سی ہوتی ہے
کہ شہرِ زیست میں ہر پل گھٹن سی ہوتا ہے
جو اپنی آنکھ سے سورج کو چھو نہیں سکتا
ترے عروج پہ اس کو جلن سی ہوتی ہے
سفر نگاہ میں روشن تو خوب ہوتا ہے
سفر خیال سے لیکن تھکن سی ہوتی ہے
ہتھیلیوں پہ اگاتا ہے خواہشیں وہ بھی
مجھے بھی پانے کی اس کو لگن سی ہوتی ہے
تمام رات اسے دیکھتا ہوں خوابوں میں
تمام دن مرے دل میں جتن سی ہوتی ہے
کبھی جو ہوتا ہے ماضی کے روبرو عادل
سنا ہے چہرے پہ اس کے شکن سی ہوتی ہے
 
**************
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 406