donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kalim Akhtar
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کوئی ہم سے خفا نہیں ہوتا *

غزل

کوئی ہم سے خفا نہیں ہوتا
آئنہ آئنہ نہیں ہوتا
دیکھتے ہیں کتر کے پھولوں کو
روبرو آئنہ نہیں ہوتا!
اس کی نظروں سے سن، جگر سے دیکھ
شعر کوئی برا نہیں ہوتا!
سجدۂ شب کہ میکدے سے اٹھو
رنگ شب دودھیا نہیں ہوتا
چھت پہ آجا، کہ تجھ کو دیکھے بغیر
چاند بھی رونما نہیں ہوتا
ابرباراں بنے، شراب آئے
چاند سے فائدہ نہیں ہوتا
کیا نہیں آپ کی غزل میں ہے!
شعر کوئی برا نہیں ہوتا
****

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 397