donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kalim Akhtar
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* صحرا بسایا جائے گا، ’’شہرایا‘‘جائے گ *

غزل

صحرا بسایا جائے گا، ’’شہرایا‘‘جائے گا
کس کس لباس میں اسے ’’نقشایا‘‘ جائے گا
ساقی نہ دے شراب، مئے ناب کی جگہ
کیا اور آب تلخ کو ’’تلخایا‘‘ جائے گا
اس کی توآگ آب ہے اور آب آگ ہے
گنجینۂ خیال ہے، ’’فکرایا‘‘ جائے گا
موجو!نفس نفس میں یہ کس نے بھرا ہے زہر
کب تک ہواے شہر کو ’’زہرایا‘‘جائے گا
اخترؔ، سخن میں کون سی تشکیل کر چلے!
تاریخ شعریات میں ’’لفظایا‘‘ جائے گا
****

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 414