donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kalim Akhtar
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* یہ برستی آگ، یہ شعلہ دل بے تاب کا *

غزل

یہ برستی آگ، یہ شعلہ دل بے تاب کا
کاش ہوتا موسم گرما میں گھر برفاب کا
کالے کالے بادلوں سے جھانکتی تھیں بجلیاں
شور ہے ساری زمیں پر جلوۂ ’’قوساب‘‘کا
رات بھر پلکوں سے ہم کانٹے ہی چنتے رہ گئے
یہ تھا عالم ’’گل محل‘‘ کے بستر کمخواب کا
منزلیں ہی ڈھونڈتی پھرتی ہیں خود اس کے قدم
چکھ لیا جس نے مزہ اس دور میں’’ہفتاب‘‘کا
دور میزائل میں اخترؔ آدمی روبوٹ ہے
کچھ اثر پڑتا نہیں اس پر کسی زہراب کا

****

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 383