donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kalim Akhtar
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* برسوں ترا رقیب رہا، بے وفا نہیں *

 

غزل
 
برسوں ترا رقیب رہا، بے وفا نہیں
پھر کیا سبب کہ تو مجھے پہچانتا نہیں
کیابات، کیاقصور، مراکیا گناہ ہے؟
میں دیکھتاہوں پیار سے تو دیکھتا نہیں!
کس منہ سے دوں حساب غم داغ جرم کا
ننگِ بدن تھا کوئی فرشتہ تو تھا نہیں!
یوں کشمکش میں رات ہماری گزرگئی
میں نے کہا نہیں، کبھی اس نے کہا نہیں
اپنی ہوابھی آج ہواؤں سے مل گئی
ہم جس ہوا کو باندھتے تھے وہ ہوا نہیں
باد  ِصبا  جلانے  چلی  ’’برقِ   سوزِ  غم‘‘  
آب و ہوا ہے، آگ ہے، کیا ہے، پتہ نہیں!
انجم تھے، چاندنی تھے کہ بدر و ہلال تھے
کس کس ادا میں آپ تھے شب بھر پتہ نہیں!
آنکھوں میں اس کی یاد کی تصویر ِغم نہ ہو!
   ایسا         ہو ا         نہیں         ،        کبھی       ایسا        ہوا       نہیں 
 
************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 374