donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* رُوح میں دُور تک اُداسی ہے *
رُوح میں دُور تک اُداسی ہے
شام ہے یا چُڑیل پیاسی ہے
 
ہر گھڑی ایک بدحواسی ہے
زندگی اَن سُنی دُعا سی ہے
 
عمر بھر کی وفا کے بعد کُھلا
ہر تعلّق یہاں سیاسی ہے
 
ہر کسی سے نبھاہ کرتا ہوں
یہ ادا مجھ میں بھی خُدا سی ہے
 
حشر کس کس کا حشر میں ہو گا
یہ حکومت تو بس ذرا سی ہے
 
عشق اور بے وجود سے ساحلؔ
یہ زمیں آسماں کی داسی ہے
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 337