donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* پہلے تو آب و تاب ستارے میں پھینک دی *
پہلے تو آب و تاب ستارے میں پھینک دی
پھر روشنی خیال کی زرّے میں پھینک دی
 
یہ کائنات، خالقِ واحد کا عشق ہے
کس نے سیاہی کُفر کی نقشے میں پھینک دی
 
تُو وہ حسین شام ہے جس کے فریب میں
قدرت نے روشنی بھی اندھیرے میں پھینک دی
 
حیران ہوں میں آج بھی اپنے نصاب سے
کس نے کتاب عشق کی بستے میں پھینک دی
 
خوائش تو بے کنار تھی، لیکن مری حدود !
میں نے فقیری یار کے رستے میں پھینک دی
 
کیا بادِ بے حجاب چلی اب کے شہر میں
شُوخی کھِلے گلاب کی غنچے میں پھینک دی
 
پہلے انا کو ذات کا حصّہ کیا ، مگر
پھر یہ چٹان توڑ کر سجدے میں پھینک دی
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 365