donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کسی بھی راہ پہ رُکنا نہ فیصلہ کر کے *
کسی بھی راہ پہ رُکنا نہ فیصلہ کر کے
بچھڑ رہے ہو مری جان، حوصلہ کر کے
 
میں انتظار کی حالت میں رہ نہیں سکتا
وہ انتہا بھی کرے آج ابتدا کر کے
 
تری جُدائی کا منظر بیاں نہیں ہوتا
میں اپنا سایہ بھی رکھوں اگر جُدا کر کے
 
مجھے تو بحرِ بلا خیز کی ضرورت تھی
سمٹ گیا ہوں میں دنیا کو راستہ کر کے
 
کسی خیال کا کوئی وجود ہو شاہد
بدل رہا ہوں میں خوابوں کو تجربہ کر کے
 
کبھی نہ فیصلہ جلدی میں کیجی ساحلؔ
مُکر بھی سکتا ہے محبوب بددعا کر کے
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 324