donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اُداسیوں کا سمندر تھا میرے حصّے م® *
اُداسیوں کا سمندر تھا میرے حصّے میں
 میں چُھپ گیا ہوں تری یاد کے جزیرے میں
 
وہ سنگِ میل ہوا وقت کے تغیّر سے
 جو سر جُھکائے کھڑا رہ گیا تھا رستے میں
 
ہوا کے آخری جھونکے نے وہ بھی لوٹ لیا
شجر کا سارا اثاثہ تھا ایک پتّے میں
 
یہ کس شریر سے بچّے کے ہاتھ میں ہے قلم
 کہ اُلٹی سیدھی لکیریں ہیں میرے نقشے میں
 
مجھے سکول کے رستے تو یاد ہیں ساحلؔ
مگر ! جو علم کی منزل تھی میرے بستے میں؟
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 316