donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* جس قدر دیکھ سکا اُس کے سوا کچھ بھی ن&# *
جس قدر دیکھ سکا اُس کے سوا کچھ بھی نہیں
مجھ کو تسلیم کی عادت ہے رضا کچھ بھی نہیں
 
بے حضوری کے زمانے کی طلب ہے دُنیا
ایک چُلّو کے سوا دستِ دُعا کچھ بھی نہیں
 
دشتِ ہجراں میں بہت دور نکل آیا ہوں
مجھ کو ویران سی وحشت کے سوا کچھ بھی نہیں
 
آئینہ خانے بدلتے ہیں مرے نقش مگر
مجھ کو بے شکل زمانے سے گلہ کچھ بھی نہیں
 
کتنا رنگین ترنّم تھا مگر جانے دے
تُو نے دیکھا نہیں میں نے بھی سُنا کچھ بھی نہیں
 
دل نے اک عمر یہاں دھوم مچائی ہے مگر
اس جنوں خیزی کے صحرا سے ملا کچھ بھی نہیں
 
میں نے بے صرفہ کیا خرچ زمانہ ساحلؔ
اب مرے ہاتھ، لکیروں کے سوا کچھ بھی نہیں
 
KHALID MALIK SAHIL
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 340