donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* چلو مسافر، اُداس شاموں کی رہ گزر م *
نظم::::::: چلو مسافر
------------------------
 
چلو مسافر، اُداس شاموں کی رہ گزر میں
 
ستارے ڈھونڈہیں
 
چھلکتی آنکھوں میں زندگی کے جو بچ گئے ہیں وہ خواب ڈھونڈہیں
 
بھٹکتی گلیوں میں آبلوں کے گلاب دیکھیں
 
پہاڑ سوچوں میں سبز رنگوں کے خواب دیکھیں
 
چلو مسافر
 
نشانِ منزل جو خواب سا ہے، جو آرزوں کا حادثہ ہے
 
اُسی کے رستے میں کہکشایں بکھیر دیں ہم
 
بقا کے رستے میں خیمہ زن ہیں،خطا کے لشکر، فنا کے لشکر
 
چلو مسافر فنا کے گھرسے
 
بقا کی کی منزل اُٹھا کے لائیں
 
حکائتوں میں حقیقتوں کا مزاج بھر دیں
 
کسی کے گھر میں
 
اندھیرے گھر میں
 
چراغ رکھ دیں
 
چھلکتی آنکھوں میں خواب رکھ دیں
*****
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 371