donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* یوں تو صحراؤں کا سینہ بھی کشُادہ ہ *
یوں تو صحراؤں کا سینہ بھی کشُادہ ہے بہت 
پا شکستوں کا مگر ایک اِرادہ ہے بہت 
کاش آ جائیں ابابیلوں کے لشکر پھر سے 
دشمنِ جاں مری طاقت سے زیادہ ہے بہت 
خُوئے چنگیزی کا اب نام فقیری ٹھہرا 
آج کے دور کا انسان بھی سادہ ہے بہت 
جسم کی بُو نہ گئی اور مسیحا ٹھہرے 
اُن کے مذہب میں فقط صاف لبادہ ہے بہت 
جوشِ درویشی میں شاہوں سے یہ کہنا ہے مجھے 
تاجِ شاہی کے لیے ایک پیادہ ہے بہت 
آج ساحل دلِ خوش فہم کو اُمید سی ہے 
اُن کا آنا نہیں ممکن بھی تو وعدہ ہے بہت 
******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 360