donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* سفر کی شام ستاروں سے پوچھ کر چلنا *
نقّاش سے 

سفر کی شام ستاروں سے پوچھ کر چلنا 
اندھیرے رستے گوائی نہیں دیا کرتے 
نشانِ قتل سپاہی نہیں دیا کرتے 
شہادتوں کا بھی اپنا مزاج ہوتا ہے 
چمکتے دن کو سیاہی نہیں دیا کرتے 
بجھا چراغ امانت ہے علم وحکمت کی 
اندھیری رات میں جگنو کی اپنی طاقت ہے 
زمیں کی کوکھ میں زرّہ حقیر تر ہے مگر 
اِسی حقیر سے زرّے میں ایک دنیاہے 
یہی خدائے حقیقت کا معُجزہ بھی ہے 
یہی زمین کے باسی کا تجربہ بھی ہے 
یہ معُجزے ہیں جو ایمان کا اثاثہ ہیں 
یہ تجربے ہی تو زینہ ہیں آسمانوں کا 
یوں معجزوں کے سمندر میں تجربے کرنا 
سفر کی شام ستاروں سے پوچھ کر چلناgross
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 342