donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* یادِ ماضی مجھے زخموں کا ثمر لگتی ہ *
خالد ملک ساحل

یادِ ماضی مجھے زخموں کا ثمر لگتی ہے
شامِ فرقت بھی سویرے کی خبر لگتی ہے
تُو نے کس شوق سے جھانکا ہے مری آنکھوں میں
چشمِ تر آج مجھے، چشمِ ہنر لگتی ہے
دیکھتا ہوں8 میں کھلی آنکھ سے سپنے تیرے
کانپ اُٹھتا ہوں مری آنکھ اگر لگتی ہے
یوں ترے نقشِ کفِ پا پہ جلائے ہیں چراغ
کہکشاں آج تری راہ گزر لگتی ہے
نیتِ آئینہ کچھ ٹھیک نہیں ہے جاناں
ایسے بن ٹھن کے نہ دیکھو کہ نظر لگتی ہے
چھیڑ کے ذکر میں اب اپنے جنوں کا ساحل
دیکھتا ہوں کہ نئی چوٹ کدھر لگتی ہے
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 360