donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalid Malik Sahil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* جنوں کا کوئی فسانہ تو ہاتھ آنے دو *
جنوں کا کوئی فسانہ تو ہاتھ آنے دو 

میں رو پڑوں گا بہانہ تو ہاتھ آنے دو 

میں اپنی ذات کے روشن کروں گا ویرانے 

قبولیت کا زمانہ تو ہاتھ آنے دو 

میں روپ اور سنواروں گا داستانوں کے 

کسی کا قصّہ پرانا تو ہاتھ آنے دو 

مری نظر میں زمانے کی کج ادائی ہے 

نشاں بہت ہیں نشانہ تو ہاتھ آنے دو 

خرید لوں گا میں دُنیا ضمیر کی ساحلؔ 

ذرا رکو، یہ خزانہ تو ہاتھ آنے دو 
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 350